Showing posts with label Hypocrisy. Show all posts
Showing posts with label Hypocrisy. Show all posts

Sunday, April 23, 2017

ہاتھ اور شرٹ

دفتر کے راستے میں میری گاڑی کے برابر سے ایک موٹر سائکل گزری جس پر ایک جوڑا براجمان تھا۔ ایک پل کے لیے میری نظر ادھر گئی۔ خاتون کا دایاں ہاتھ ڈرائیونگ سیٹ پر بیٹھے صاحب کے زانو پر پشت کے بل ایسے دھرا تھا جیسے ان کے ہاتھ سے صاحب کی قمیص بے دھیانی میں  نکل گئی ہو۔ بس ایک لمحے میں یہ منظر آنکھ سے اوجھل ہوگیا لیکن وہ ہاتھ آج بھی میرے دھیان میں ویسے ہی وہیں دھرا ہے۔ 


Wednesday, November 30, 2016

عزت و بے عزتی کے معیارات

صابن کا اشتہار:

ایک نوجوان خاتون، کاندھے سے نیچے ڈھلکتے ہوئے لباس میں ایک نوجوان مرد کو Seduce کر رہی ہیں اور مشتہر یہ پیغام دے رہا ہے کہ اگر آپ لکس سے غسل فرمائیں گی تو آپ کا شوہر یا بوائے فرینڈ آپ کے جسمانی قرب کے لیے پاگل ہوجائے گا۔ 

دوسرے اشتہار میں ایک اور خاتون اپنے برہنہ شانوں پر صابن کا پردہ ڈالے شاور میں کھڑی پتا نہیں خواتین کو یا حضرات کو مطلوبہ صابن سے غسل پر آمادہ کر رہی ہیں۔

ملک و قوم و نظریہ پاکستان کے ذمہ داران سورہے ہیں۔

Sunday, July 17, 2016

خرد کا نام جنوں

ہمارے معاشرے میں خاص کر شہری معاشرے میں طلاق کی بڑھتی ہوئی شرح کا الزام خواتین کی تعلیم اور ملازمت پر رکھ دیا جاتا ہے۔ 

خوب ۔

شادی ایک سماجی معاہدہ ہے۔ اور معاہدے دو یا زائد فریقوں کے درمیان برابری کی بنیاد پر ہوتے ہیں ورنہ وہ معاہدے نہیں سمجھوتے کہلاتے ہیں۔ لہذہ شادی بھی ایک ایسا ہی معاہدہ ہے جو ایک مرد اور ایک خاتون کے درمیان برابری کی بنیاد پر طے ہوتا ہے اور اسے برابری کی بنیاد پر ہی جاری رہنا چاہیے۔ لیکن برصغیر خصوصاً پاکستانی معاشرے میں یہ معاہدہ شاذ و نادر ہی برابری کی بنیاد پر ہوتا ہے۔ یہاں شادی دراصل شوہر کی ہوتی ہے۔

یہ ایک یک طرفہ معاہدہ ہوتا ہے جس میں دوسرے فریق کا کام صرف پہلے فریق کا حکم بجالانا فرض کرلیا جاتا ہے۔ دوسرا فریق یعنی بیوی پہلے فریق یعنی شوہر کی مرضی کے مطابق سانس لے گی، اس کے خاندان کی خدمت بجا لائے گی۔ اسکی جنسی ضروریات اسکی مرضی اور فریکوئنسی کے مطابق پوری کرے گی، اسکی اجازت سے لوگوں سے میل ملاقات کرے گی، اسکی مرضی اور اجازت کے مطابق ملازمت کرے گی یا نہیں کرے گی۔ گویا اسکی اپنی کوئی شخصیت ، مرضی یا ضروریات نہیں ہیں۔

Thursday, November 19, 2015

مستقبل کا حیران پریشان، جنگل بیابان مورخ

داعش/خود ساختہ خلافت اسلامیہ مسلمانوں کو مار رہی تھی۔ امریکہ اور اسکے پالتووں کو کوئی پریشانی نہیں تھی۔ پھر روس درمیان میں کود پڑا اور شام کے ساتھ مل کر داعش کی پٹائی شروع کردی، اس پر امریکہ نے روس کو کہا کہ خبر دار ، جو ہمارے کام میں دخل دیا۔

اب روس اگر داعش کی پٹائی کر رہا تھا تو داعش کو روس میں دہشت گردی کرنی چاہیے تھی۔ لیکن اس نے فرانس میں کاروائی کردی۔ اور فوری طور پر فرانسیسی بحری بیڑا داعش کے خلاف کاروائی کرنے خلیج فارس پہنچ گیا۔ اور جی 20 ممالک نے داعش کے خلاف کاروائی کا اعلان کیا ۔

Tuesday, September 8, 2015

چوری میرا پیشہ ہے ، نماز میرا فرض

مقام: پاکستان
تاریخ: چھ ستمبر 2015
وقت: رات دس بجے تقریباً

اے آر وائی زندگی: بھارتی کامیڈی پروگرام
اے آر وائی نیوز: یوم دفاع کی خصوصی تقریب جی ایچ کیو سے براہ راست

جیو کہانی: بھارتی سوپ سیریل
جیو نیوز: یوم دفاع کی خصوصی تقریب جی ایچ کیو سے براہ راست

ایکسپریس اینٹرٹینمنٹ: بھارتی ڈرامہ
ایکسپریس نیوز: یوم دفاع کی خصوصی تقریب جی ایچ کیو سے براہ راست

Bastards 

Sunday, September 6, 2015

Syria: Refugee Crisis

I am sure when God will ask Shah Salman of KSA, why you did not help your Muslim brethren in Need.

He will present the Highest Clock Tower in front of him and tell him "My Lord I was busy extending Haramain Ashareefain".

یوم دفاع کی گولڈن جوبلی مبارک

پاکستانی سینماز میں بھارتی فلموں کی کھڑکی توڑ نمائش
پاکستانی چینلز پہ بھارتی ڈرامے
لوکل کیبل پر بھارتی موویز
موبائلز میں یو یو ہنی سنگھ کے گانے
یو یو ہنی سنگھ کے ہئیر اسٹائل
سلمان خان اور کترینہ جیسا فیشن
.
.
اور بھارتی تھرڈ کلاس اداکاراوں کو شرماتے ہوئے پاکستانی آئٹم سانگز کے ساتھ

قوم کو ڈیفنس ڈے کی گولڈن جوبلی مبارک ہو

Wednesday, August 5, 2015

ڈی سیٹنگ کا انصاف


ایک اصول ہے کہ ایک معینہ مدت تک اسمبلی سے غیر حاضر رہنے والے کی رکنیت ختم ہو جائے گی ۔اسپیکر استفعیٰ دینے والے رکن کا استعفیٰ ہفتے دس دن میں قبول کرنے کا پابند ہے، تو پھر پی ٹی آئی اور حکومت کیا ڈرامے کر رہے ہیں ۔۔ انقلابیوں پر تھو وو ہے جو ایک اسمبلی کی رکنیت قربان نہیں کر پا رہے، اور بے غیرتی سے تنخواہیں لے کر بیٹھ گئے ۔۔ اتنے ہی اصول پرست اور انصاف پسند تھے تو جب کام نہیں کیا تو تنخواہ کس مد میں وصول کر لی ۔۔ شوکت خانم کو امداد اپنی جیب سے دو اور عوام کا پیسہ واپس کرو۔ اور کرپشن کس چڑیا کا نام ہے ۔

Friday, November 28, 2014

"کم از کم" ایمان والی قوم

حدیث نبوی کا مفہوم ہے کہ جب تم کوئی برائی دیکھو تو اسے ہاتھ سے روکو، ہاتھ سے نہ روک سکو تو زبان سے روکو/برا کہو اور اگر زبان سے بھی نہ کہہ سکو تو دل میں برا جانو، اور یہ سب سے کمزور ایمان کی نشانی ہے۔ یعنی یہ" کم از کم" یہ تو کرو کہ اس سے کراہت کرو تاکہ تم اسے اس برائی میں خود نہ مبتلا ہوجاو یا اس کے عادی نہ ہوجاو اور کم از کم اس کو برا تو سمجھتے رہو۔
ہم نے اس" کم از کم" کو پلو سے باندھ لیا ہے اور ہر معاملے میں بس کم از کم پر تکیہ کر کے بیٹھ جاتے ہیں ۔ یعنی :

Tuesday, July 29, 2014

بھائی لوگ :P

"نسرین تم باقی سب کی طرح مجھے بھائی کیوں نہیں کہتیں؟"

"کیونکہ آپ سے بات کرنے کے لئے مجھے آپ کو بھائی کہنے کی ضرورت نہیں ہے۔ میں بطور ایک انسان بھی آپ سے بات کرسکتی ہوں۔ میں آپکو بھائی کیوں کہوں، مجھے اپنی نیت پر اعتبار نہیں یا آپکی "

یہ اس گفتگو کا نچوڑ ہے جو فیس بک پر تقریباً دوسال گپیں لگانے کے بعد ہو رہی تھی۔ ہماری دوستی کے حلقے میں شامل تقریباً تمام افراد بلا تفریق ان کے نام کے ساتھ بھائی لگا کر پکارتے ہیں لیکن میں ہمیشہ انکا نام لیتی ہوں۔ انکا کہنا بھی ایسا غلط نہیں تھا ہم ایک ایسے معاشرے میں رہتے ہیں جہاں صنفی تقسیم بہت گہری ہے۔ مرد و عورت کو زبردستی اور مصنوعی طور پر الگ الگ شیلفوں میں سجایا ہوا ہے۔

Saturday, September 21, 2013

ترقی پسندی

ترقی پسندی بھی ایک طرح کی انتہا پسندی ہی ہے اگر اس میں دوسروں کی رائے کا احترام نہ ہو، ایک طرف لوگ مّلا کی شامت لے آتے ہیں کہ وہ اسلام کی غلط تشریح کرتا ہے، اسکی سوچ محدود ہے، دوسری جانب ملا کہتا ہے، خبر دار میں اسلام کا ٹھیکدار ہوں مجھے تم سے زیادہ اسلام پتہ ہے، خبردار مجھ سے پوچھے بغیر ایک لفظ کا مطلب بھی خود سے سمجھنے کی کوشش کی، تیسری جانب اگر کوئی خود سے بڑھ کر نیک نیتی سے یہ جاننا چاہے کہ آخر مذہب ہے کیا، کتاب میں کیا لکھا ہے، تو ترقی پسند انتہا پسند اتنی شدت سے اسکا مضحکہ اڑاتے ہیں کہ وہ دل برداشتہ ہو کر پیچھے ہٹ جائے،۔

سوال یہ ہے کہ یہ ترقی پسند انتہا پسندی جان بوجھ کر ملا کی پوزیشن مضبوط کر رہی ہے، یا نا سمجھی میں؟